MUNICIPAL SOLID WASTE IN LAHORE

Municipal solid waste is generally a type of waste consisting of everyday items discarded by the public excluding agricultural waste, industrial waste, medicinal waste etc. MSW is known by different names in different regions e.g. in the United States it is known as “TRASH” and “GARBAGE” while known as “REFUSE” and “RUBBISH” in Great Britain.

Lahore is 2nd largest metropolitan of Pakistan, the provincial capital of Punjab with more than 11 million individuals over an area of 1772 km2. About 5000-6000 tons of waste is produced daily in Lahore and only 60-65% is collected, and reaming 35-40% is left unhandled.

Characterization of MSW is the first step towards integrated waste management. It helps by giving information about which type of waste is being discarded and in which proportion and It also helps policymakers to design newer and effective policies for better waste management. In waste characterization Generation Rate, Composition, Density, Moisture content, Loss of mass on ignition and Calorific value are mainly focused.

Composition of MSW changes from municipality to municipality and time to time. Globally, MSW contains 38.1% paper, 13.4%-yard waste, 10.4% plastics, 9.4% food waste, 7.7% metals, 5.9% wood, 5.2% glass and 9.9% other materials.In Lahore MSW contains 72.76% biodegradable waste, 5.58% nylon, 5.35% diapers, 4.71% textile, 3.83% combustible material, 3.42% non-combustible material, 2.34% paper & cardboard, 0.77% tetra packs, 0.45% plastics, 0.43% glass, 0.18% hazardous waste, 0.08% pet, 0.05% electronic waste and 0.04% metals.

Social and economic factors also influence the composition because of difference in lifestyle, waste production etc. Low-income areas mainly contain a higher proportion of biodegradable waste while higher income area contains a higher proportion of biodegradable waste, diapers, pet, packaging material etc.

In order to properly manage MSW, all stockholders must perform their duties in an effective manner. We must change our lifestyle. We must adopt 3R’s as best solution for effective management of MSW. We must use reusable bags instead of using single use plastic bags. We must avoid individually wrapped items at the store and promote recyclable materials. We must consider composting scraps and food waste rather than throwing it away. Zero waste policy is an effective approach to tackle solid waste problems and it must be implemented in educational institutions, industries, government and private office. Government and other institutions associated with waste management e.g. LWMC, Albayrak, Ozpak etc. must improve their strategy of waste collection by increasing institutional capacity, joining hands with NGO’s working on the ground, this will help is increasing ratio of collected waste. The government must focus on providing plastic bags for effective waste collection. Multimedia (electronic and press) ads and training seminars are effective approached to indulge targeted audience to aware people regarding proper waste management.

Impact of Climate Change on Agriculture and Mitigation Strategies

Climate change is manifested in a range of short-term weather events and long-term climatic trends that are deeply affecting agricultural systems, especially the rain-fed and subsistence ones. The most common changes being witnessed are unreliable rainfall periods (delayed commencement or early cessation of rains), erratic rains, leading to extended dry spells punctuated by intermittent rainfall events,  heavier-than-usual rainfall events and above-average air and soil temperatures.

Crops are dependent on temperature, light, moisture and COto produce grains and other crop products to satisfy the basic human needs. Climate change is very likely to affect food security at the global, regional, and local level. Climate change can disrupt food availability, reduce access to food, and affect food quality. Increases in temperature, changes in precipitation patterns, changes in extreme weather events, and reductions in water availability may all result in reduced agricultural productivity.

Higher CO2 levels can affect crop yields. Some laboratory experiments suggest that elevated CO2 levels can increase plant growth.  Though rising CO2 can stimulate plant growth, it also reduces the nutritional value of most food crops. More temperature both high and low and precipitation can prevent crops from growing. Extreme events, especially floods and droughts, can harm crops and reduce yields. These are a source of rising concentration of greenhouse gases which in turn are the major reasons of global warming and other changes in climate The climate change is characterized by rising temperature, erratic and lower rainfall declined  frequency  but  with  greater intensity,  changing  seasons,  and  occurrence of  extreme  events floods  and  droughts.

Resource poor farmers are greatly affected by these changes that result in lower or failed agricultural production, higher incidence of pests and diseases, and an overall reduction in the efficiency and productivity of farming systems. There is an urgent need to adapt traditional agricultural systems to these changes in order to make them more resilient to climatic shocks and stresses. Broader actions are also needed to mitigate climate change itself in other words to actually reduce the magnitude or rate of climate change.

Climate Smart Agriculture may be a viable mitigation tool that includes both new and old agricultural practices that are considered effective in helping farmers adapt to climate change and among some groups to mitigate climate change.  Apart from this  varieties which  are  tolerant  to  high  temperature  and  drought   should  be developed  so  that  losses  could  be avoided.  The  temperature  component may  shorten  the  growth  periods; therefore  the  cultivating time  should be  adjusted  accordingly.

 

 

Impact of Climate Change on Agriculture

Pakistan is an agriculture country and agriculture is a backbone of the country. It is necessary to focus on agriculture to enhance food security, life quality and to support economic growth. Our country is ranked 28th country which is affected by the climate change severely. Pakistan is a country which is totally dependent on agriculture and 42.3 % people are earning money from agriculture sector. Now, It,s  contributation in GDP (Gross domestic product) is believed to 24 % which was 31 % in 1980-81 but in 2017-18 it is decreased to 18.9 % (Economic survey of Pakistan, 2017-18). Economy of any country cannot be improved without increasing agriculture production. The agriculture sector in Pakistan plays a pivotal role as the income of more than 47 percent of the population is dependent on this sector. From few years agriculture production is decreasing at high level. Now a day,s climate change has become an alarming issue which affecting crop productivity. Agriculture and climate change, both are interconnected. Last Century, temperature has raised 1 ̊C due to fossil fuel burning and deforestation which is still negatively affecting the crop production and environment as well. Due to climate change the growing season of crops has been decreased.

There are two season for the growing of agriculture crops in Pakistan. It is grown in Rabi and Kharif season. These two seasons play an important role in the economy of Pakistan. But agriculture production is also affected by climate change throughout the year. Temperature and precipitation are two different factors which are contributing in changing climate. Threshhold level of temperature is different for different crops and it is fluctuated day to day. If the temperature is enhanced from their threshold level, then it is very dangerous for crop yield. It is observed that 14 % of methane and nitric oxide are producing from the agriculture sector which are very dangerous for human health also. Last Century, temperature has raised 1 ̊C due to fossil fuel burning and deforestation which is still negatively affecting the crop production and environment as well. Due to climate change the growing season of crops has been decreased.

It is estimated that temperature will increase up to 3°C by 2040. Pakistan is very vulnerable for climate change and its affect on agriculture production. From last few years temperature is increasing with low rainfall. Rainfall has positive impact on agriculture production but negative impact of climate change is more as compared to positive impact.

It is concluded that it is necessary to shift crops according to their temperature before the onset of diseases.  Through adopting these strategies, we will be able to reduce the adverse effects of climate on crops production. There is need to make adaption measures to solve the problems of agriculture sector. To avoid green gas emission, implement industrial and nation energy policy which will be contributed to climate mitigation. To overcome the impact of climate change, should be changing cropping pattern, introduce innovative farm machinery and practices. Through the collaboration with plant breeders and providing them research facilities so that they will be able to develop such varieties of crops that have ability to face in all type of climate and produced high yield.

گلیشیئرز اور درپیش مسائل

تخلیق کائنات کے بعد اللہ تعالی نے بنی نوع انسان کو خلق کیا انسان کو اشرف مخلوقات کا شرف بخشنے کے ساتھ ساتھ ضروریات زندگی کا بھی بندوبست کیا۔ تمام تر نعمات خداوندی سے آراستہ انسان اپنے معمول زندگی کو سمجھ کر اپنے خالق حقیقی کی پیروی کرنے لگا۔ انسانوں کی تبلیغ و تربیت کے لئے خداوند متعال نے جا بجا اپنے نمائندے مقرر کیے جو کہ اپنے اپنے ادوار میں آکر انسان سازی اور ترویج میں اپنا بہترین کردار ادا کیا۔ قدرت کے کرشمے ہر سمت بکھر گئے جن سے بنی نوع انسان مستفید ہو سکیں۔ ان کرامات الہیہ میں سے سب سے بڑی کرامت و نعمت خداوندی پانی کو قرار دی گئی ہے جسکی وجوہ سے تخلیق انسانیت وجود میں آئی۔ پانی کی نعمت بنی نوع انسان کے لئے اللہ تعالی کی طرف سے ایک بڑا اور اہم تحفہ ہے۔ پانی زندگی بخشتا ہے پانی کے بغیر نظام زندگی درہم برہم ہو کر رہ جاتا ہے۔ پانی کے بغیر انسان تو کیا دنیا کی کوئی بھی شے زندہ نہیں رہ سکتی۔ پانی ہی ہے جو بنجر سے بنجر زمین کو بھی سیراب کرکے تازگی بخشتا ہے۔ پانی کا سب سے بڑا منبع و ذریعہ گلیشیئرز کو مانا جاتا ہے۔ گلیشیئرز ہی کی بدولت ہمیں پانی جیسی نعمت میسر ہوتی ہے۔ قدرت کے تمام انتظامات میں سے سب سے بڑا انتظام گلیشیئرز کا ہے۔ گلیشیئرز کے بغیر پانی حاصل کرنا ناممکن و محال ہے اور نظام زندگی بھی ممکن نہیں۔ پاکستان میں حالیہ پانی کی قلت کا سامنا ہے اور سخت مشکلات درپیش ہیں۔ گرمی کی شدت میں دن بہ دن اضافہ ہورہا ہے اسی طرح پانی کی بھی مقدار میں کمی ہورہی۔ ڈیموں کا پانی قدرے خشک ہوتا جا رہا ہے اور عوام بے حال ہوئے جارہے۔ دوسری جانب گلیشیئرز کا پگھلاو تیزی سے ہورہا ہے کیونکہ گرمی کی شدت اور ماحولیاتی آلودگی میں دن بہ دن اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔ غیر معمولی حرارت کے اضافے کے باعث برف کا پگھلاو عروج پر ہے اسی طرح دریاؤں کا پانی بڑھ جاتا ہے جس کی وجہ سے آس پاس کے آبادیوں کو سیلاب کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ اسی طرح وہاں کے لوگوں کو بھاری نقصان پہنچتا ہے۔ ایک اندازے کے مطابق یہ سلسلہ کئی برسوں تک جاری رہے گا پھر دھیرے دھیرے گلیشیئرز پگھل کر ختم ہو جائنگے جس کے نتیجے میں دریاؤں میں پانی کی قلت واقع ہوگی اور لوگ سخت محرومی سے دوچار ہونگے۔
حالیہ ایک اندازے کے مطابق یہ بات ذیر غور لائی گئی ہے کہ دنیا بھر میں گرمیوں کا سلسلہ جلد شروع ہوتا ہے اور ان گرمیوں کا دورانیہ لمبے عرصے تک برقرار رہتا ہے اس طرح سردیوں کے لئے کم ہی وقت بچتا ہے جسکی وجہ سے برفباری کی شرح میں کمی واقع ہوتی ہے۔ اسی طرح گلیشیئرز کے جمنے کا بھی کم ہی امکان ہوتا ہے جہاں گلیشیئرز پائے جاتے ہیں وہ علاقے کافی ٹھنڈے ثابت ہوئے ہیں اب گرمیوں کی شدت کی وجہ سے ان گلیشیئرز کا پھگلاو بہت جلد ہوکر پانی کے بہاو میں اضافہ ہو جاتا ہے۔
جیو سائنس یونین کی ایک رپورٹ کے مطابق سن 2100ء تک ہمالیہ کے ستر فیصد گلیشیئرز پھگل کر ختم ہو جائنگے اور دوسری جانب نظر دوڑائی جائے تو درجہ حرارت کی اضافت سے گلگت بلتستان اور چترال کے مختلف مقامات میں 5000 سے زائد گلیشیئرز بڑی تیزی سے پھگل رہے ہیں۔ منسٹری آف کلائمٹ چینج کے مطابق گلوبل وارمنگ جو آج صرف پاکستان ہی نہیں بلکہ پوری دنیا کا ایک سنگین مسئلہ بن کر رہ گیا ہے جسکی وجہ سے گلیشیئرز کا تیزی سے پھگلاو، شدید گرمی، سطح سمندر میں اضافہ، خشک سالی میں اضافہ اور زمین بنجر ہونے کے شدید خدشات لاحق ہیں۔ گزشتہ چند سالوں سے گلیشیئرز کے پھگلاو میں مسلسل اضافہ دیکھا گیا ہے جس سے دریائے سندھ کے پانی میں اضافہ بھی محسوس کیا گیا۔ جس کے نقصانات کافی حد تک پریشان کن ہیں۔ 
گلوبل وارمنگ جو آج کا سب سے بڑا سنگین مسئلہ ہے جسکی وجہ سے بارشوں میں اضافہ ہورہا ہے جبکہ پہاڑی علاقوں میں برفباری کا دورانیہ بہت قلیل ہوتا جارہا ہے۔ برفباری کے اس کم دورانیے کی وجہ سے برف گلیشیئرز میں زیادہ عرصے تک نہیں رکتی جسکی بدولت گلیشیئرز میں اضافہ کے بجائے کمی لاحق ہوتی ہے۔ ان دونوں بدلتے ہوئے موسموں کی وجہ سے گلیشیئرز کے پھگلاو کا شدید سامنا ہے۔ جس کے بدلے میں پانی کے بہاو میں اضافہ ہوکر ارد گرد کے علاقوں میں سیلاب کا خدشہ ہے جس پر علاقہ نشین شدید اور بھاری نقصان کی ذد میں آتے ہیں شدید پانی کے بہاو کی وجہ سے زمینی کٹاو بھی ہوتا ہے۔ گلگت بلتستان کے اکثر و بیشتر علاقوں میں بڑی تعداد میں گلیشیئرز پائے جاتے ہیں جو کہ ہمارے لئے انتہائی کارآمد اور اہم ہیں۔ گلگت بلتستان کے حوالے سے بات کی جائے تو مستقبل قریب میں سی پیک کا بول بالا ہو گا مگر یہ گلیشیئرز کے لئے بہت بڑا نقصان دہ ثابت ہوگا کیونکہ براستہ گلگت سی پیک تو گزرے گا مگر اسکے نقصانات چونکا دینے والے ہونگے اسکی سب سے بڑی وجہ یہ ہوگی کہ بھاری تعداد میں ٹریفک کا گزر ہوگا جس کی وجہ سے ماحولیاتی و فضائی آلودگی میں قدرے اضافہ ہوگا بھاری تعداد میں ٹریفک کی آمدو رفت سے زہریلی گیسوں کا اخراج ہوگا جس کی وجہ سے فضائی آلودگی برھ جائے گی اور گلیشیئرز کے پھگلاو کا عمل تیز سے تیز تر ہوتا جائے گا۔
ہر سال گلگت بلتستان میں سردیوں کے دوران 80 فیصد لوگ لکڑی کا استعمال کرتے ہیں جس کے باعث 70 فیصد کاربن ڈائی آکسائیڈ کا اخراج ہوتا ہے جس سے ماحول تباہی کا شکار ہوتا ہے اسکے علاوہ آج کل جنگلات کا کٹاو عروج پر ہے جو کہ آج ہمارے لئے سب سے بڑا سنگین مسئلہ ہے کیونکہ جنگلات کے بے تحاشا کٹاو کے باعث ماحولیاتی آلودگی میں دن بہ دن اضافہ ہوتا ہے۔ لوگ جوق در جوق جنگلات کی کٹائی میں اضافہ کرتے ہیں مگر اس کے بدلے میں نئے جنگلات کا اگاو نہیں نہیں کرتے۔ ایک اندازے کے مطابق یہ دیکھا گیا ہے کہ صرف ایک درخت 30 لوگوں کو آکسیجن فراہم کرنے میں مدد گار ثابت ہوتی ہے۔ اسی طرح اگر اندازہ لگایا جائے تو جنگلات کی اندھا دھند کٹائی کس طرح جان لیوا ثابت ہوسکتی ہے۔
گلوبل وارمنگ کے باعث درجہ حرارت میں آنے والی تغیرات سے گلیشیئرز کے پھگلاو کا عمل تیز ہوتا ہے ان وجوہات کے باعث بہت سے سنگین خطرات ابھر کر سامنے آتے ہیں جن میں لینڈ سلائڈنگ، زلزلے اور بڑھتے ہوئے درجہ حرارت کے باعث گلیشیئرز کا اپنی جگہ سے سرکنا یا برفیلے تودوں کا زمین پر گرنا شامل ہیں۔ جن کی وجہ سے عام علاقہ نشینوں کی زندگیوں کے گزر بسر کے لئے شدید خطرات لاحق ہیں۔
ایک سروے کے مطابق ہمالیہ، قراقرم اور ہندوکش مل کر دنیا کا سب سے بڑا پہاڑی سلسلہ بناتے ہیں جوکہ گلگت جگلوٹ کے مقام پر آکر ملتے ہیں ان پہاڑی سلسلوں کو دنیا کا سب سے بڑا برف کا ذخیرہ مانا جاتا ہے اور یہ پہاڑی سلسلے ایشیاءکے سات بڑے دریائی نظام کے ذریعے 17 ارب لوگوں کی خوراک کا وسیلہ ہیں۔ مگر حالیہ رپورٹ کے مطابق ان پہاڑی سلسلوں کی برف میں بے تحاشاپگھلاو کا سامنا ہے اور ان پہاڑی سلسلوں کی برف کا پگھلاو کوئی آفت سے کچھ کم نہیں۔ 
ان خطرات کو مد نظر رکھتے ہوئے حکومت وقت کو چاہیے کہ گلیشیئرز کے پھگلاو کے روک تھام کے متعلق آگاہی مہمات کا انعقاد کیا جائے جن میں لکڑی کا استعمال ایک حد تک کم ہو۔ جنگلات کے کٹاو پر پابندی، ٹریفک کو محدود کر دیا جائے۔ جنگلات میں اضافے کے لئے سالانہ شجرکاری کی جائے۔ اور دریاؤں کے