بھوک، خوراک

یہ ہے ہمارا کامیاب پاکستان جہاں بھوک اور افلاس کا بازار گرم ہے غریب طبقہ اپنی پیٹ کی آگ بجھانے کے لئے کیا کیا نہیں کرتے اور ہم کس حد تک گہرائیوں میں جا کر ریسرچ ورک کرتے ہیں۔ یہ ریسرچ یہ مردم شماری کے گراف بنانا سب کچھ میری نظر میں فضول ہے کیوں کہ ہمارے ملک میں غریبوں کی کوئی شنوائی نہیں ہوتی۔۔ہر کوئی اپنی دھت میں مست ہے اور اپنی ہی ذات کے بارے میں سوچ کر پریشان ہیں۔
ویسے دیکھا جائے تو یہ ہمارے معاشرے کی ایک مسک تصویر ہے جو ہر کسی کی ضمیر کو جھنجوڑ کر رکھ دیتی ہے۔

Save Food Fight Hunger

Are we humans?
Who gave us right to throw food on streets? who gave us right to ignore poor people and hungry children begging at the streets? why they are doing so? they don’t wish for a luxury lifestyle like others?
Yes they wish.they also have feelings.but when all the doors are seemed to be closed then people are enforced towards begging.hunger is the most important factor that forces people.
A hunger man is the most helpless person in the world and he can do anything for his hungry children.
The other side of scenery,
a person ordered two pizzas for dinner, for the family of 3 persons. they eat one and keep the rest for next day.on next day the pizza gets spoiled and he throws it out in a basket outside of the house. poor kids wandering at streets and begging for food saw the pizza and rush towards the basket to take it and eat half pizza on the spot and take remaining at their self-made broken house to eat it at dinner…
Please stop wasting food…
eat simple, live simple, let other people eat what is their basic right…
#savefoodsavehunger

Solutions to Save Food to avoid Hunger

Food is the basic need of life and in a country like Pakistan people are not having enough food and yet most of the food we eat is wasted daily in homes, hotels, malls and picnic places. We need to manage food by preventing it from wastage. For this purpose, we must initiate a project to create awareness among people to stop wasting that food and to properly pack and distribute it among the needy ones.

It’s the right time to take an initiative as a nation to contribute towards food safety while changing people’s thinking to create this country a better place for all.

As a Pakistani, I feel very helpless when I see people eating wasted food from the dustbins. Allah blessed this beautiful country with all the natural resources and it is a grower of all the important crops. Agriculture sector of Pakistan contributes a major part in the economy as it accounts for 21% of GDP.

But still many people in Pakistan sleep with empty stomachs. Some strategies should be devised so that all the citizens of this country may get the necessity of life i.e. food daily.

So, take the first step towards change from yourself and stop wasting the food. Fill your plate with a little less than you need. At home, meals should be made in just the appropriate amount so that no excess food can be wasted.

If by chance the meals prepared are more than your daily requirement, then pack them in a proper way and distribute among the needy people around you. Give them what you choose for your own self.

Create awareness among people to stop spoiling the food through different kinds of seminars and public service messages. If you see some people in your area doing such activities try to communicate them effectively and help them to be a better person.

Your way of communication should be kind towards people. Try to avoid criticizing people.

بھوک، خوراک کی طلب اور خوراک کا بے تحاشا ضیاع

اللہ تعالی کا لطف و کرم ہر انسان پر قائم ودائم ہے اور انسان کو اشرف المخلوقات کا درجہ دے کر اللہ تعالی نے یہ ثابت کیا ہے کہ انسان وہ واحد دنیا میں خلقت ہے جس کا کوئی ثانی و نعم البدل نہیں۔ مگر انسان یہ سوچنے سے قاصر ہے۔ آج ہمارے معاشرے میں کتنے ایسے لوگ ہیں جن کو دو وقت کی روٹی تک نصیب نہیں ہوتی مگر ان لوگوں کا کوئی پرسان حال نہیں کوئی مسیحا ایسا نہیں جو انکی شنوائی کر سکے۔ اس نفسا نفسی کے عالم میں ہر کسی کو اپنی ہی ذات کی پڑی ہوئی ہے جو صرف اور صرف اپنا پیٹ پالنے کے سوچوں میں گم ہے۔
آج ہم پاکستان کے لوگوں کی بات کرے تو ہر طرف بھوک اور افلاس کا ایک سماں ہے نہ کوئی غریبوں کی مدد کرنے والا ہے اگر مدد کرنے والا ہے بھی تو مستقل مزاجی سے اپنی خدمات سر انجام نہیں دے رہا۔ پاکستان کی ہر گلی کے نکڑ میں ہوٹل بنائے گئے ہیں اور طرح طرح کے طعام کا بندوبست بھی ہے مگر آفسوس اس امر کا ہے کہ کھانے ہوٹلوں میں سڑتے ہیں مگر مجال ہے کہ کسی غریب کو دیاجائے۔۔
ماہ مبارک رمضان میں ہم فخر سے افطاری کا بہتر سے بہتر انتظام کرتے ہیں اور دکھاوے کے لئے دسترخوان میں موجود طعام کی تصویریں بنا کر سوشل میڈیا میں چڑھاتے ہیں لیکن اس بات سے بے خبر ہیں کہ ہمارا غریب طبقہ ایک وقت کی روٹی کھانے کے لئے ترستا ہے۔ اللہ تعالی کا خوف ہر شخص کے دلوں سے ختم ہوتا دکھائی دیتا ہے اور اس پر غور و فکر کرنے کی کوشش کوئی نہیں کرتا ہے کہ آیاں ہمارے معاشرے میں جو غریب طبقہ ہے اسکو ایک وقت کی روٹی میسر ہے کہ نہیں۔۔ہمارے حکمران تو اب غریب عوام کو بھول ہی گئے ہیں وہ لمحہ بھر کے لئے نہیں سوچتے ہیں کہ ہماری غریب عوام کسی حال میں جی رہی ہے۔۔
ہمیں ایک مسلمان ہونے کی حیثیت سے یہ جان لینا چاہیئے کہ ہمارے غریب طبقے کی طرف توجہ دلانے میں مکمل طور پر رہنمائی ہو اور تمام غریب غربا کی ہر ممکن مدد ہو سکے۔۔
اگر ہم غیرت کا مظاہرہ کر کے ہوٹلوں کے تمام تلف ہونے والے کھانوں کو سڑنے سے پہلے ہی بچا کر کسی غریب کو دے دیں تو مقصد انسانیت بھی پورا ہوگا اور ایک غریب کا پیٹ بھی بھر جائے گا۔
اسی لئے کسی شاعر نے کیا خوب کہا ہے۔۔!
درد دل کے واسطے پیدا کیا انسان کو
ورنہ طاعت کے لئے کچھ کم نہ تھا کرو بیاں