ہماری سوچ میں مثبت تبدیلی اور بنیادی انسانی حقوق کی تعلےم

حقوق حق کی جمع ہے اور حق سے مراد ایک ایسا مفاد ہے جس کی حفاظت ریاست کی ذمہ داری ہوتی ہے۔ حق اور ضرورت میں بہت فرق ہوتا ہے۔ ہر انسان کو پیدائش سے چند بنیادی حقوق مل جاتے ہیں مثلاً زندگی جینے کا حق ،آزادی رائے کا حق ،معلومات لینے کا حق ،مل جل کر بیٹھنے کا حق ۔انسانی حقوق کی تحریک میں ہر دور کے علمائ، صوفیا اور انقلابی رہنماﺅں نے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے احتجاج میں آواز بلند کی ہے۔ اس تحریک کے باقاعدہ آغاز کا سراغ روم اور یونان سے ملتا ہے اور اس سلسلے میں ہمورابی کا قانون بہت اہمیت کا حامل ہے اور زندگی کے تمام پہلوﺅں کی نمائندگی کرتا ہے۔ اس کے بعد یہ تحریک مختلف مراحل میں سے گزرتی ہوئی ایک عالمی منشور پر آکر رکی جس نے اس تحریک کو باقاعدہ اور منظم شکل دی۔ پہلی اور دوسری جنگ عظیم میں کروڑوں جانوں کے نقصان کے بعد اقوام عالم نے ایک معاہدہ قبول کیا جس کی پہلی شق کے مطابق تمام انسان بلا تفریق رنگ ونسل برابر ہیں۔ اس معاہدے کو دنیا میں انسانی حقوق کے عالمی منشور (UDHR) کے نام سے جانا جاتا ہے اور یہ 10دسمبر1948کو منظور کیا گیا، اس کی 30 شقیں ہیں جو انسانیت کو تمام بنیادی حقوق دینے کی ضامن ہیں۔ آج 192ممالک اس معاہدے کو قبول کرتے ہیں اور انسانی حقوق کے فروغ کے لیے کوشاں ہیں۔ انسانی حقوق کو لوگوں تک پہچانے کا طرےقہ بھی خود کار سسٹم کی طرح ہونا چاہیے۔ ےعنی لگاتار ، مسلسل چلنے والا سسٹم۔ شروع سے لے کر آخر تک تمام لوگوں کو ہر قسم کے حقوق حاصل ہونے چاہیے۔

جےسا کہ رےاست ہم عوام سے اےک خود کار نظام کے تحت ٹےکس لےتی ہے مگر اسکے بدلے مےں ہمےں وہ بنےادی حقوق سے محروم رکھتی ہے ۔ ےہاں مےں تھوڑا ٹےکس کے تفصےل بتاتا چلوں ٹےکس دو طرح کے ہوتے ہےں :

براہ راست محصول /ٹےکس :  جیسا کہ لفظ سے ہی ظاہر ہے کہ اےسامحصول جو عوام خود جا کر حکومت کے اکاﺅنٹ مےں جمع کرائے براہ راست محصول کہلاتاہے۔ مثلاً پراپرٹی کی خریدوفروخت پر یا پھر کوئی لائسنس بنوانے پر یا پھر گاڑی ، ادارہ وغیرہ رجسٹر کروانے پر حکومت عوام سے ٹیکس لیتی ہے ۔

بالواسطہ محصول /ٹےکس : وہ محصول جو کہ ہم لوگ با لواسطہ طرےقے سے ادا کرتے ہےں۔ مثلاً مختلف کمپنیاں اپنے اوپر لگنے والے محصول قیمت میں شامل کر دیتی ہیں سیلز ٹیکس وغیرہ۔جیسے گورنمنٹ ٹیکس لینے کے لیے براہ راست ےا بلا واسطہ طرےقہ استعمال کرتی ہے اسی طرح انسانی حقوق کی فراہمی کے لیے بھی اےک خود کار طر ےقہ ہونا چاہیے۔ اگر ہم اندازہ لگائیں تو ایک سیاسی حلقے میں ایک دن کا ٹیکس تقریباً 50 لاکھ روپے جمع ہوتا ہے۔ اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ اتنا ٹیکس جمع کرانے والوں کو کیا حکومت ان کے حقوق بہم فراہم کر رہی ہے؟

معاشی ترقی جہاں ریاستی انتظام وانصرام کے لیے سرمایہ کی فراہمی کو یقینی بناتی ہے۔ وہیں نجی وبیرونی سرمایہ کاری معاشی تفریق کو بھی جنم دینے کا سبب بنتی ہے۔ بیرونی سرمایہ کاری جو کہ بین الاقوامی ادارے کرتے ہیں، اگر مناسب ضبط میں نہ رکھے جائیں تو ملکی سرمایہ کا بہاﺅ بیرون ممالک ہونے سے منفی اثرات مرتب ہوتے ہیں۔ پاکستان کو اسلامی جمہوریہ پاکستان کہا جاتا ہے لیکن آج ہمارا ملک غیر ملکی امداد کے سہارے چل رہا ہے۔ علاوہ ازیں پاکستان نے اپنی آزادی کے 65سالوں کا ایک طویل عرصہ فوجی اکثریت کے تسلط میں گزارا ہے جس کی وجہ سے جمہوری عمل شدیدمتاثر ہوا ہے۔ انسانی حقوق اور معاشی ترقی کا جائزہ کچھ اعداد وشمار سے لگایا جاسکتا ہے۔

2010تک پاکستان میں 12948صحت کے ادارے کام کررہے تھے ان میں مریضوں کے لیے بستر کی تعداد 104137تھی اور ہسپتالوں کی کل تعداد 104137تھی۔ کل ڈاکٹرز 14490اور 73244نرسز تھیں۔ یعنی ہر چار ہزار افراد کے لیے پانچ معالج اور دو نرسز کا تناسب بنتا ہے۔ اس تشویشناک صورتحال کے باوجودصحت کے لیے بجٹ میںخام ملکی پیداوار (G.D.P)کا2.4فیصد مختص کیا گیا ۔ کل آبادی کے صرف 48فیصد تک صاف پانی کی دستیابی ہے۔ مہنگائی 11.1فیصد اور بیروزگاری کی شرح 7.5فیصد ہے۔

پاکستان کی برآمدات کازر مبادلہ 25.35ارب جبکہ درآمدات کا 35.82ارب روپے ہے۔ نتیجتاً پاکستان میں معاشی اور معاشرتی عدم استحکام کی صورت حال شدید ابتر ہوتی جارہی ہے اور اس نے پاکستان کو ناکام ریاستوں میں 12نمبر پر لاکھڑاکیا ہے جوکہ 2010میں 10پوزیشن تک جاچکا تھا۔

ہمارے گردونواح میں با اثر افراد نے سیاست کو ذاتی کاروبار یا جاگیر بنا لیا ہے۔ ہم لوگ بھی ووٹ کاسٹ کرتے وقت اپنی محلوں کے چودھریوں کو سامنے رکھتے ہیں ۔ کسی بھی پارٹی کا منشور یا قیادت کے نظریات کی قدر نہیں کرتے ۔ جبکہ ترقی یافتہ ممالک میں لوگ ووٹ صرف اور صرف پارٹی منشور یا پھر پارٹی قیادت کے فیوچر پلان کو سامنے رکھ کر کاسٹ کرتے ہیں۔ وہاں سیاست ایک ادارہ ہے جو بھی اہل ہو گا اسے موقع ملے گا۔ جبکہ ہمارے ہاں سیاست موروثیت کا شکار ہے ، ایک اےم۔اےن۔اے کا بیٹا ہے اگلی دفع اےم۔اےن۔اے کا امیدوار بنے گا۔ پارٹی کے دوسرے کسی رکن کو اجازت نہیں ملتی۔ یہاں ہمارے سیاسی حقوق کو قتل کیا جا رہا ہے۔ چونکہ ہم ووٹ غلط کاسٹ کرتے ہیں اس لیے سزا بھی ہمیں کو بھگتنا پڑتی ہے۔ہمارہ معاشرہ 5 معاشرتی ستونوں پر کھڑا ہے۔

1۔ خاندان2۔ تعلیم3۔ مذہب4۔ اکنامکس 5۔ سیاست

ہماری سوچ کی بنیاد ہمارے خاندان سے شروع ہوتی ہے جب ہم پیدا ہوتے ہیں تو ہم ہمارے آس پاس ہونے والے عوامل کو آہستہ آہستہ اپنا لیتے ہیں۔کیونکہ میں آج جہاںہوں ، جو بھی ہوں، اور جیسے ہوں یہ سب ایک حادثاتی بنیاد پر مبنی ہے۔ میرا مذہب میں نے خود نہیں چُنا کیونکہ میرے دادا کا یہ مذہب تھا اور پھر یہ میرے باپ کو منتقل ہوا اور پھر اِسی طرح مجھے بھی۔ یہی وجہ ہے کہ طرز فکر میں تبدیلی کا پہلا سبب خاندان ہے۔ دُنیا میں ہزاروں زُبانیں بولی جاتی ہیں جو کہ حالت و واقعات اور ضروریات کی پیش نظر سامنے آئیں۔ لیکن آج ہر زبان کی اپنی الگ پہچان ہے ۔ اِس طرح مذاہب بھی مختلف ہیں اور ہر کسی کو ایک دوسرے کے عقیدے اور ایمان کی عزت کرنی چاہیئے۔ قرآن پاک میں کہیں بھی رب المسلمین نہیں لکھا گیا بلکہ رب العلمین لکھا گیا ہے۔ اور یہی ہمارا جمہوری رویہ ہے کہ ہم ایک دوسرے کے مذاہب کا احترام کریں۔ جب ہم جمہوریت جمہوریت کی آواز لگاتے ہیں تو پہلے یہ سوچ لینا چاہئیے کہ کیا ہمارے رویے اور ہمارے گھروں میں جمہوریت ہے؟ اصل مسئلہ ہی یہ ہے کہ ہمارے اندر جمہوری رویے نہیں ہیں اور کوئی ایسا ادارہ بھی نہیں جو جمہوری رویوں کے فروغ کے لیے کام کرتا ہو۔ اِسی طرح ہماری سوچ میں تبدیلی کے لیے ہماری کمیونٹی بھی کارفرما ہوتی ہے اور کمیونٹی میں ہماری درسگاہیں اور سکول بھی شامل ہیں۔ اور ہمارے سکولوں میں جو نصاب ہمیں پڑھایا جاتا ہے اُس سے ہماری سوچ کی مزید تر قی ہوتی ہے لیکن وہ مثبت ہے یا منفی یہ نصاب پر منحصر ہے۔ ہمارے ملک پاکستان کے آئین میں بھی انسانی حقوق شامل ہیں لیکن جب تک ہمیں یہ پتا ہی نہیں کہ ہمارے حقوق کیا ہیں اور ہم کس سے وہ حقوق مانگ سکتے ہیں یہ کون ہمارے حقوق دینے کا مجاز ہے اُس وقت تک حقوق کا حصول نا ممکن ہے۔ اور ہماری درسگاہوں اور سکولوں میں پڑھائے جانے والے نصاب میں انسانی حقوق کی تعلیمات کا کہیں بھی ذکر نہیں جبکہ یورپین ممالک میں پانچویں جماعت تک طالب علموں کو اُن کے بنیادی حقوق کا پتا چل جاتا ہے۔

چنانچہ ہماری سوچ میں مثبت تبدیلی کے لیے ہمیں بنیادی انسانی حقوق کا پتا ہونا بہت لازم ہے اور اِس کے لیے انسانی حقوق کی تعلیم کا عام ہونا بہت ضروری ہے۔ اور لوگوں کو یہ پتا ہونا چاہئیے کہ حق کیا ہوتا ہے اور اُسے کیسے اور کہا سے حاصل کرنا ہے۔ اِس کے لیے ریاست کا کردار مثبت ہونا بہت ضروری ہے کیونکہ ریاست ایک ماں ہوتی ہے اور جس طرح ہماری سوچ کی بنیاد ہمارا خاندان ہے اُسی طرح سوچ میں مثبت تبدیلی کے لیے ریاست کردار بھی اہم ہے

ملڪي سطح تي خواجه سرائن جي اهميت ۽ کين مهيا ٿيل سهولتون

زرعي معاشري ۾ موجوده  مختلف ٽيبوز صدين کان اڃان تائين ساڳئي شدت سان موجود آهن. انهن ٽيبوز مان هڪ اهو به آهي ته  گھر ۾ جڏهن ٻار جنم وٺندو آهي. ته گھر ڀاتين جون ڪيفيتون به ٻار جي جنس مطابق تبديل ٿينديون آهن . اگر پٽ ڄمي ته سموري گھر ڀاتين جي چهري تي خوشي واري ڪيفيت جھلڪي پوندي آهي. جيڪڏهن نياڻي ڄمي پوي ته نه چاهيندي به سمورن ڀاتين جي چهري تي رنج واروراڪاس لڪائڻ باوجود به لڪي ناهي سگھندو، ڪنهن نه ڪنهن صورت ۾ جهلڪي پوندو آهي. پر ڪڏهن ڪڏهن ڪنهن گھر جي ڀاتين جي حالت  مرڳوئي مجرمانه ٿيو پوي، جڏهن ان گھر ۾ پيدا ٿيندڙ ٻار نه پٽ هوندو آهي نه وري ڌيءُ ، اهڙي گھرن ۾ ان وقت قهرام مچي ويندو آهي. نه صرف سمورو گھر پر سمورو معاشروبه اهڙي ٻار کي قبول ڪرڻ لاءِ تيار نه هوندو آهي. اهڙي ٻار جو انت آڻڻ لاءِ سمورا هٿڪنڊا جڏهن هلي ناهن سگھندا تڏهن ئي هو ساهه کڻڻ لاءِ معاشري ۾ ڦٽو ڪيو ويندو آهي. سندس والدين معاشري ۾ رسوائي جي  خوف کان ڪيترا ئي ڏينهن ٻار جي سڃاڻپ لڪائيندا آهن.

انهي ڪيفيت ۾ اهو ٻار جڏهن سمجھ لائق ٿئي ٿو. ته هو هڪ وڏي ذهني اذيت  ۾ مبتلا ٿيو وڃي. سماج جا منفي رويه اهڙي ٻار کي باقي ٻارن کان الگ ڪري بهاريو ڇڏين. جڏهن ته اهو به هڪ انسان آهي ڪنهن به سماج ۾ بنيادي انساني  حقوق مطابق اهڙن ماڻهن جو به پورو پورو حق هوندو آهي. ته هو به کليل هوا ۾ آزادي سان  ساهه کڻي سگھن.

پاڪستان جي آئين جي  آرٽيڪل نمبر 25 موجب قانون جي نظر ۾ سڀ شهري برابري جي حيثيت رکن ٿا ۽ برابري جي بنياد تي قانوني تحفظ جا حقدار آهن. محض جنس جي بنياد تي ڪنهن به شهري سان امتيازي سلوڪ نه ڪيو ويندو.  جڏهن ته انساني حقن جي آرٽيڪل نمبر 2 ۾ پڻ واضع نموني لکيل آهي ته سمورا انسان آزاد پئدا ٿيا آهن. عزت، وقار ۽ حقوق  جي سلسلي ۾ برابري جي حيثيت جا حامل آهن. پر بدقسمتي سان اسانجي سماج ۾ پيڙهيل طبقن کي وڌيڪ ذلتن  ڀري زندگي گذارڻي پوي ٿي ۽ کين نيچ ڏيکارڻ  لاءِ نت نوان طريقا استعمال ڪيا وڃن ٿا.

جنهن جو وڏو مثال خواجه سرا  جي سڃاڻپ ۽ مڃتا آهي، جيڪا انهن کي نٿي ڏني وڃي. معاشرو خواجه سرائن جي  تعليم حاصل ڪرڻ ۾ وڏيون رڪاوٽون وجھندو آهي جنهن سبب هو تعليم حاصل ڪري ناهن سگھندا. اهڙي ڏکين حالتن مان گذري اگر ڪو خواجه سرا ٿوري گھڻي تعليم پرائي وٺي ته وري معاشري جا مهذب کيس عزت ڀريو روزگار حاصل ڪرڻ جي راه ۾ رڪاوٽون وجھندا آهن. غلطي سان جيڪڏهن اهڙي خاص ماڻهون کي ڪو عزت ڀريو روزگار حاصل ڪرڻ ۾ ڪاميابي  ملي به وڃي. ته هو پنهنجي بدني بناوت ۽ لباس جي ڪري   گڏ ڪم ڪندڙن جي نظرن جو مرڪز هوندو آهي. وڏي ڳالهه ته هن سماج جا ماڻهون انهن کي پاڻ سان گڏ هلائڻ به عيب سمجھن ٿا. پر جيڪڏهن اسين پنهنجي پاڙيسري ملڪ انڊيا تي نظر وجھنداسين ته اسان کي محسوس ٿيندو ته اتان جي حڪومتن ۽ سول سوسائيٽي خواجه سارائن کي معاشري ۾ عزت ڀريو مقام مهيا ڪرڻ لاءٌ منجھائن ڪجھ خواجه سرائن کي  ٽيڪس وصولي واري اداري ۾ روزگار ڏئي سندن  جون اسپيشل ٽيمون ٺاهي کين ٽيڪس وصولي لاءِ معمور ڪري ڇڏيو آهي. هو هر سال لڳ ڀڳ 1000 هزار ڊالر پراپرٽي ٽيڪس وصولي ڪري حڪومت کي جمع ڪرائن ٿا. پر اسان وٽ ته هي مظلوم ڪنهن نه ڪنهن صورت ۾ صرف ٽيڪس ڏين ٿا.

عزت ڀريوروزگار نه ملڻ ڪري هو مجبور ٿي ڳائي وڄائي، نچي ماڻهن کي خوش ڪري خيرات  وٺي گذران ڪن ٿا ڪي وري جسم فروشي جھڙو غلط پيشو اختيار ڪري  پيٽ جي باه وسائن ٿا ۽ سر لڪائڻ لاءِ اجھي جو بندوبست
ڪن ٿا.

2009ع ۾پاڪستان  سپريم ڪورٽ هڪ آرڊر پاس ڪيو. جنهن ۾ خواجه سرائن جي قومي شناختي ڪارڊ ۾ کين جنس واري ڪالم ۾ خواجه سرا لکائڻ جي اجازت ملي.

عام طور تي ڏٺو وڃي ته هي به انسان آهن. صرف سندن بدني بيهڪ جي ڪري ٻين کان الڳ آهن. پوءِ انهن ۾ ڪي عورت هوندا آهن ته ڪي وري مرد، ڪي قدرتي خسرا هوندا آهن. ته ڪي وري هٿرادو ٿيندا آهن. پر سماج انهن کي بلڪل مختلف نظرن سان ڏسي ٿو. اگر ڏهن ماڻهن ۾ هڪ خواجه سراهه هجي ته مرداڻي معاشري ۾ ماڻهون ٻين کي ڇڏي صرف ان کي ئي  نظرن جو مرڪز بڻائيندا آهن. پوءِ ان صورت ۾ هو يا ته گھٻرائجي ويندا آهن. يا ته ڪاوڙ ۾ زر ٿي ويندا آهن. ٻئي ڪيفيتون انهن لاءِ نقصان جون حامل هونديون آهن.

هن ملڪ جي آئين مطابق کين اليڪشن ۾ حصو وٺڻ جو حق آهي . جنهن تحت هو 2013 واري اليڪشن ۾ سرگرم رهيا. پنهنجن حقن کي پاڻمرادو حاصل ڪرڻ لاءِ هو ڪوششون وٺهندا رهيا. ڏسڻو اهيو آهي ته  ايندڙ اليڪشن ۾ هي پنهنجي جستجو کي ڪيئن جاري رکي سگھندا. جڏهن ته موجودا آدمشماري مطابق سندن سراسري ڳڻپ سڄي پاڪستان ۾ صرف 10،000 آهي.جڏهن ته هڪ اندازي مطابق صرف لاهور شهر ۾ خواجه سرائن جو انگ ڏه هزارن کان مٿي آهي  انهي عالم ۾ جڏهن هنن جي آبادي ڪنهن سازش تحت گھٽ ڄاڻائي وئي آهي. ته پوءِ ڇا کين اهي انسان ووٽ ڏيندا؟ جيڪي کين پاڻ سان گڏ وهاريندي به عيب ٿا سمجھن.

اسان جي معاشري ۾  خواجه سرائن کي  برداشت ڪرڻ جي اهڙي صورتحال آهي ته پوءِ ته اهيو ڪيئن ممڪن آهي ته هي مظلوم طبقو پنهنجو آواز وس وارن تائين پهچائي  ته جيئن ملڪ ۾ انهن لاءِ به اهي سڀ سهولتون مهيا ٿين. جهڙيون ٻين انسانن لاءِ موجود آهن. يا کين به معاشرتي ليول تي  ٻين جهڙو سمجھيو وڃي.ڇو ته خواجه سراه جي بدن ۾ به اهو ئي رت گردش ڪري ٿو جيڪو ڪنهن ٻيءِ انسان جي بدن ۾ هوندو آهي . ڳالهه صرف سمجهه جي آهي. هي جنس  به اسان جي سماج جو هڪ اهم حصو آهن.

پنجابی ہو تو پنجابی کیو ں نہیں بولتے؟

بیوی شوہر سے۔بنٹی کے پاپا، آپ سے ایک بات کرنی تھی۔
شوہر نے جواب دیا۔ہاں کہو؟
بیوی بولی۔ہمارے پڑوس میں جب سے نئی فیملی آئی ہے ہمارا بنٹی بگڑسا گیا ہے۔
شوہرنے حیرت زدہ ہو کر پوچھا۔کیا مطلب؟
بیوی نے مضحکہ خیز انداز میں کہا مطلب یہ کہ ہمارے پڑوسی پینڈو سے ہیں پنجابی بولتے ہیں۔بھلا آج کل کون پنجابی بولتا ہے۔(قہقہ لگاتے ہوتے)آج کل تو انگلش کا زمانہ ہے بھئی لجن جب سے ہمارا بنٹی بھی انکے بچے کے ساتھ کھیلنے لگا ہے اُسکا بول چال بھی بدلا بدلا سا ہے۔
شوہر نے کہا۔یہ تو اچھی بات نہیں ۔ہم اپنے بچے کے مستقبل کیلئے اتنی منصوبے بنا رہے ہیں اوریہ پنجابی سیکھنے بیٹھ گیا۔کون بولتا ہے آج کل پنجابی ،کرتا ہوں میں اس سے بات۔

دوستو! مندرجہ بالا وہ کہانی ہے جو ہم پنجابیوں کے گھر میں کبھی نہ کبھی ضرور دوہرائی جاتی ہے۔کیا کبھی ہم نے اس بات پر غور کیا کہ ایسا کیوں ہے؟پاکستان میں بسنے والے تمام افراد علاقائی اور ثقافتی طور پر اپنے پہناوے، بول چال اور رہن سہن کے اعتبارسے کیوں مختلف ہیں ۔بلوچستان میں رہنے والا شخص بلوچی بولے گا، خیبر پختونخوا میں رہنے میں پشتو اور دیگر علاقائی زبانیں بولے گا، اسے طرح سندھ میں رہنے والاسندھی ۔لیکن پنجاب میں رہنے والا پنجابی سے زیادہ اپنی قومی زبان اردو کو ترجیح دیتا ہے۔اسی طرح علاقائی، ثقافتی اورمذہبی اعتبار سے بھی پاکستان میں متعدد زبانیں بولی جاتی ہیں جیسے کہ سرائکی، کشمیر ی، مارواری، گجراتی، ہندکو، پہاڑی ،دہروی وغیرہ وغیرہ ۔اگر ان زبانوں کے بولنے والے ملک کے کسی کونے میں بھی کیوں نہ چلے جائیں وہ اپنے ہم زبان سے اپنی علاقائی یا ماں بولی میں بات کرے گا۔لیکن پنجابی دوسرے پنجابی کو دیکھ کرپنجابی میں بات نہیں کرے گا۔

بچپن میں جب ہم اپنے والدین کے ساتھ گاؤں جاتے تھے تو وہاں ہمارے شہری پہناوے اور خصوصاً ہمیں اردو بولتا دیکھ کر گاؤں کے لوگ بالخصوص بچے حسرت بھری نگاہوں سے ایسے دیکھتے تھے جیسے ہم لاہور سے نہیں امریکہ، یورپ یا لندن سے آئے ہیں۔اور واپس آکر اگر ہم ایک آدھ جملہ پنجابی کا سیکھ لیتے تو والدین ڈانٹ دیتے کہ خبردار پنجابی بولی تو۔انگلش میڈیم میں کس لئے پڑھا رہے ہیں آپکو۔اُس دور میں کم از کم گاؤں دیہاتوں میں رہنے والی پنجا بی تمام کنبہ ہی اپنی علاقائی زبان یعنی پنجابی میں بات کرتے تھے۔ لیکن آج ایسا بالکل نہیں ہے۔ ماں باپ چاہے آپس میں پنجابی بولیں لیکن اپنے بچے کو پنجابی بولتا کبھی نہیں دیکھ سکتے۔الٹا اگر کوئی بولنے کی کوشش بھی کرے تو اسکو ڈانٹ دیا جاتا ہے ۔

ویسے پنجابی بولے جانے پر ہم اتنا خوف زدہ کیوں ہیں؟ کون ہے اسکا ذمہ دار؟ والدین؟ تعلیمی اور پالیسی ساز ادارے ؟ حکومتِ وقت ؟ ہمارا معاشرہ؟یا وہ لوگ جن کے بارے میں ہمارے بڑے ہمیشہ سے کہتے آئے ہیں “لوکی کی کہن گے” ۔کبھی ہم نے سوچا کہ اگرساری زند گی ایک انگریز ماں باپ کی اولادپختون، بنگالی یا سندھی کے گھر پلے بڑھے تو وہ بھی اس گھر میں رہنے والوں جیسا رنگ ڈھنگ اختیار کرے گا، اور انگریزی نہیں بلکہ اس گھر میں بولی جانے والی زبان بولے گا۔ لیکن یہ کلیہ بھی پنجابیوں پر لاگو نہیں ہوتا۔

ذیادہ دُور نہ جائیں تواپنے ہمسایہ ملک بھارت میں رہنے سکھ برادری کو ہی دیکھ لیں ۔یہ برادری کہیں بھی ہواپنی ثقافت کو نہیں بھولتی بلکہ اسکے فروغ کے لئے ہر ایک فرد پیش پیش نظر آتا ہے۔ دنیا کے کسی کونے میں بھی چلے جائیں پنجابی پنجابی کو دیکھ کہ اپنی ماں بولی میں بات کرتا ہے۔لیکن یہ روایت بھی بارڈر پارپاکستانی پنجابیوں میں نہیں پائی جاتی۔بلکہ اگر کوئی غلطی سے پنجابی بولتا پایا جائے تو اسکودوسرا پنجابی ہی اس حقارت کی نگاہ سے دیکھتا ہے جیسے اس شخص نے کوئی قابلِ شرم کام کر ڈالا ہو۔دیکھو کتناپینڈو ہے پنجابی میں بات کر رہا ہے۔ ہمارے بچے تو انگریزی میڈیم میں پڑھتے ہیں ہم نہیں بننے دینگے انکو پینڈو۔

میرے داد اابو کی شادی پنجابی گھرانے میں ہوئی جبکہ وہ پٹھان تھے۔یہ روایت انہوں نے میرے والد سمیت تمام بیٹے بیٹیوں کی شادیوں کیلئے برقرار رکھی۔لہذا پنجاب میں رہنے اور پنجابیوں میں شادی ہوتے ہوتے سب پنجابی ہو گئے۔ لیکن پنجابی زبان تو پھر بھی نہ بولی گئی۔اور اگر بولی بھی گئی تو صرف والدین کی پیڑھی تک۔میرے ذہن میں اکثر یہ سوال اُٹھتا ہے کہ آخر کیوں؟ کیا یہ زبان بولناہمارے لئے شرمناک بات ہے؟ ہم کوشش کرتے ہیں کہ پنجابی بولنا تو دور کی بات ہمارا لہجہ تک پنجابی نہ ہو۔اور اس ناپسندیدگی میں پنجابی ہی پنجابی کو رد کرتادکیائی دیتاہے۔میں نے یہ تک سنا ہے کہ اس شخص سے پروگرام کی نظامت نہیں دینی چاہئے کیونکہ اسکا لہجہ بہت پنجابی ہے۔بھئی واہ! کیا انصاف ہے۔ لہذا اگر ہمارا لہجہ پنجابی ہے تو ہم کسی سے کمتر ہو گئے۔پنجابی لہجہ ہونا یا پنجابی بولا جانا صلاحیت، علم اور ہنر کے ہونے یا نہ ہونے تو طے تو نہیں کرتی۔ کیا کبھی کسی نے ایک پختون کو، سندھی کو، فارسی کو اردویا انگریزی بولتے سُنا ہے۔انکے لہجے سے سو فیصد ان کی ماں بولی کی جھلک ملتی ہے جوکہ انکے لئے قابل فخر بات ہے توایک پنجابی کیلئے کیوں نہیں؟

ہم کتنے روپے خرچ کر کے انگریزی، جرمن اور اب تو چینی زبان بھی سیکھ رہے ہیں تا کہ ہم دوسری قوم کے ساتھ اسکی ثقافت بانٹ سکیں، اس سے روابط بڑھا سکیں ۔لیکن اپنی ماں بولی کو سیکھنے سکھانے بولے جانے کیلئے ہم نے کیا کوششیں کی؟ یہاں میرا استفسا ر ہے نہیں کہ دوسری زبانیں نہ سیکھی جائیں بلکہ صرف اتنی التجا ہے کہ اپنی ثقافت کو مرنے سے بچایا جائے۔یقین جانئے ۔اگرپنجابی قوم نے اپنی ثقافت بچانے کیلئے اب کچھ نہیں کیا تو چند سالوں میں۔جی ہاں گنتی کے چند سالوں میں پنجابی زبان درحقیقت کیا ہے؟لکھنا تو دور کی بات بولی کیسے جاتی ہے اسکے لئے ہمیں تاریخ کی کتابیں کھولنی پڑیں گی؟

One way flow- Mcdonaldization, The cultural Diversity

Being a 90’s child I have risen up in a society where the great transformation happened in all ways. I remember the time when we had one PTCL phone that was used by our four to five families at a time and also was pride to share it with neighbors while they need it. I have seen those times when schools had very limited subjects to teach and universities were a dream to get in. In my childhood I never thought of the phenomena that why and how things get faster and better, it was fantasy to see personal computers turning into laptop and those laptops into wrist watch computers which is a good thing anyways.

Few things about world system remind me questioned that how the mini burger stalls are overlap by KFC , Mcdonald, burger king etc, and how we convinced ourselves to eat those international brands ? Remember when first time you entered in McDonalds? How was your feel to be there? Honestly may be you found yourself unfit to the environment but visiting that place repeatedly you got familiar to the way McDonald required. The English song, the cozy surrounding the unique perfume and tempting food changed our mind sets from the past 15 years like never before.

All this is not because of mild chicken burgers but importantly due to the mcDonaldization which is a one way flow from the American and European societies. McDonaldization alone is worthless until it is not attach with globalization or we could say mcdoladiztion is a part of globalization. Many around the world are at benefit with the emergence of both together but many on other hand remain still deprived due to decline of local values. According to the world system theory the core and semi periphery countries have used globalization to make periphery countries grow up and at the same time not to grow up with local brands and remain intact with international brands to meet international standards of living which is again not a bad idea but what about the economic growth of third world countries which have stuck into providing raw material to the first world nations as a tradition to earn money.

The one way flow doesn’t mean only food but it is about so many other things includes culture, traditions, life style, education, harmony, art, language etc. Since rapid globalization around the world has created space for nations to bring their culture in other nations and break this one way flow, as we see migration of hundred and thousands of people for various purposes to live in other countries that has mix up all the colors.

A recent example is a decorated and designed truck of Pakistani culture in America that is attracted by most of the Americans these days. The impacts of mcDonaldization are hard to evaluate in this modernization era where every social setup has mixed up with other and created examples of “Uniqueness in diversity”.

Merit of this rapid process has saved a lot of time and that was earlier spent to complete a task but what about rest of the time that is spent on social apps, merits of mcdonaldization says that one burger is equal to one meal that was earlier served with chapatti, curry and full salads as a requirement to full the belly, it absolutely time saving alternate but what about the production market of wheat and maize which has declined due to high consumption of burger food. Merits are attach with demerits and could not evaluate in isolation. Fast music in a fast food restaurant has fasten the minds but this only prevails in few classes of society e:g upper class,upper middle class and middle class rest of all are rest in peace or trying to access the fast food restaurants with average credits in hand.

Globalization is a global process that has produced harmonies among life styles of all the nations around, yet many languages, cultures, social identities, ethnicities are burnt into burry and have no place on planet. We should accept the diversity and one way flow but should keep our nationalities in flow as well so that globalization can bought well for all.